جب ای-میل نہ تھی؛ تب وی-میل تھی!

انتظار فرمائیں۔۔۔

دوسری جنگ عظیم کے کچھ عرصے بعد امریکی افواج کو ایک بڑے مسئلے نے آ گھیرا اور وہ تھا فوجیوں تک ان کے عزیز و اقارب کے خطوط پہنچانا۔ کہنے کو تو یہ کام بہت آسان لگتا ہے اور بظاہر اس میں کوئی مسئلہ نظر بھی نہیں آتا لیکن جب فوجیوں کو لکھے جانے والے خطوط کی تعداد سینکڑوں نہیں ہزاروں میں ہو تو ان کی ایک جگہ سے دوسری جگہ ترسیل خاصی مشکل ثابت ہوتی ہے۔ یاد رہے کہ یہ اس زمانے کی بات ہے کہ جب پانی کے جہازوں پر سامان درآمد اور برآمد کی جاتا تھا۔

چونکہ امریکی افواج کو جہازوں میں ہتھیاروں غذائی اشیاء کے علاوہ دیگر سامان رکھنے کے لیے بہت کم جگہ فراہم کی جاتی تھی اس لیے فوجیوں کو لکھے گئے خطوط کے ڈھیر جہاز پر لاد کر لے جانا ممکن نہیں ہو پارہا تھا۔ برطانوی ایئرگراف سروس نے اس مشکل کا حل وکٹری میل یعنی وی-میل کی صورت میں نکالا۔

ایسٹ کوڈیک کے خیال پر مبنی یہ سروس 15 جون 1942 سے شروع کی گئی اور اسے عسکری محاذوں پر موجود فوجی اہلکاروں اور ان کے خاندان کے درمیان رابطے کی سہولت کے طور پر استعمال کیا جانے لگا۔

وی-میل استعمال کرنے کا طریقہ کافی عجیب و دلچسپ تھا۔ پہلے عام پنسل اور کاغذ کی مدد سے خط لکھا جاتا، پھر اس کی تصویر لے کر اسے مائیکروفلم کے رول میں منتقل کردیا جاتا۔ اپنی منزل پر پہنچ جانے کے بعد اس مائیکروفلم کو ایک مرتبہ پھر کاغذ پر منتقل کر کے اس شخص کو پہنچا دیا جاتا کہ جس کے نام یہ لکھا گیا تھا۔ چونکہ مائیکروفلم بنانے کا طریقہ مخفی روشنائی کو بھی باآسانی پکڑا جاسکتا تھا اس لیے اس کا ایک فائدہ یہ ہوا کہ اس وقت کی حکومت فوجیوں کو لکھے جانے والے خطوط کی نگرانی کرنے لگی کہ آیا کسی خط میں کوئی خفیہ بات تو نہیں چھپی ہوئی۔

وکٹری میل کے طریقے کو استعمال کرتے ہوئے 1600 خط کو ایک فلم رول میں منتقل کردیا جاتا تھا۔ اس رول کا سائز سگریٹ کے ڈبے جتنا ہوتا تھا۔ یوں 2000 پاؤنڈ وزنی کاغذ کی تھپیوں اور 20 سے 37 بڑے بیگوں کی جگہ ان فلموں کے ایک بیگ نے لے لی۔

آئیے اب آپ کو وی-میل کی تیاری کے مراحل بذریعہ تصویر دکھاتے ہیں:

ایک ڈاکیے مائیکروفلم میں منتقل کرنے کے لیے خطوط جمع کروا رہا ہے۔ یہ تصویر پینٹاگون میں قائم کیے گئے سرکاری ڈاک خانے کی ہے۔

ایک ڈاکیے مائیکروفلم میں منتقل کرنے کے لیے خطوط جمع کروا رہا ہے۔ یہ تصویر پینٹاگون میں قائم کیے گئے سرکاری ڈاک خانے کی ہے۔


وی-میل کے لیے خطوط کو مائیکروفلم میں منتقل کیا جارہا ہے۔ اس سے قبل ان کا اندراج اور چھانٹی کر کے فلم کے لیے تیار کیا جاتا تھا۔

وی-میل کے لیے خطوط کو مائیکروفلم میں منتقل کیا جارہا ہے۔ اس سے قبل ان کا اندراج اور چھانٹی کر کے فلم کے لیے تیار کیا جاتا تھا۔


بیرون ملک تعینات فوجی اہلکاروں کے نام لکھے گئے خطوط کی تصویر لے کر وی-میل مائیکروفلم میں منتقل کیا جارہا ہے۔

بیرون ملک تعینات فوجی اہلکاروں کے نام لکھے گئے خطوط کی تصویر لے کر وی-میل مائیکروفلم میں منتقل کیا جارہا ہے۔


وی-میل تیار کرنے کے بعد اسے ممکنہ خامیوں سے پاک کرنے کے لیے جانچا جارہا ہے۔

وی-میل تیار کرنے کے بعد اسے ممکنہ خامیوں سے پاک کرنے کے لیے جانچا جارہا ہے۔


وی-میل کی مائیکروفلم میں موجود خطوط کو کاغذ پر منتقل کیا جارہا ہے۔

وی-میل کی مائیکروفلم میں موجود خطوط کو کاغذ پر منتقل کیا جارہا ہے۔


وی-میل مائیکروفلم کے ذریعے چھپنے والے صفحات کی روشنائی کو سوکھاتے ہوئے حتمی شکل دی جارہی ہے۔

وی-میل مائیکروفلم کے ذریعے چھپنے والے صفحات کی روشنائی کو سوکھاتے ہوئے حتمی شکل دی جارہی ہے۔


وی-میل مائیکروفلم سے چھپنے والے صفحات کو جانچ کر علیحدہ کیا جارہا ہے۔

وی-میل مائیکروفلم سے چھپنے والے صفحات کو جانچ کر علیحدہ کیا جارہا ہے۔


تیار شدہ وی-میل خطوط کو ترتیب وار رکھا جارہا ہے تاکہ انہیں منزل پر پہنچایا جاسکے۔

تیار شدہ وی-میل خطوط کو ترتیب وار رکھا جارہا ہے تاکہ انہیں منزل پر پہنچایا جاسکے۔


ایک وی-میل کا عکس۔

ایک وی-میل کا عکس۔

loading ads...

Facebook Comments



POST A COMMENT.