اوباما کی چھوٹی صاحبزادی والد کی الوادعی تقریر کے دوران کہاں تھیں؟

انتظار فرمائیں۔۔۔

شکاگو میں بہ حیثیت صدر اپنی آخری تقریر کے دوران باراک اوباما جذباتی ہو گئے اور ایک موقعے پر انہوں نے رومال سے اپنے آنسو صاف کیے۔ یہ وہی جگہ ہے کہ جہاں آج سے ایک دہائی قبل انہوں نے اپنی انتخابی مہم کا آغاز کیا تھا۔ لیکن جب باراک اوباما تارکینِ وطن مخالف جذبات اور معاشی ناہمواری کے خطرات بیان کر رہے تھے، تو تب پوری دنیا کو اسٹیج پر ایک فرد کی کمی محسوس ہوئی۔

برطانوی اخبار، دی انڈیپنڈنٹ کے مطابق، اگرچہ اوباما کی جذباتی الوداعی تقریب سننے کے لیے میشل اوباما اور ان کی بڑی بیٹی، مالیا اوباما موجود تھیں، لیکن ان کی چھوٹی صاحبزادی، ساشا اوباما کہیں دکھائی نہیں دے رہی تھی۔ اوباما کی تقریر کے دوران ہی ٹویٹر پر ’’ ساشا کہاں ہیں‘‘ کا ہیش ٹیگ مشہور ہو گیا۔ اس موقعے پر لوگوں نے مختلف قیاس آرائیاں کیں۔ بعض افراد کا کہنا تھا کہ 15سالہ ساشا نئے امریکی صدر، ڈونلڈ ٹرمپ کو وائٹ ہائوس میں داخل ہونے سے روکنے کے لیے منصوبے تیار کرنے میں مصروف ہے۔

لیکن حقیقت یہ ہے کہ ساشا کو اس کے اسکول کی جانب سے اپنے والد اور امریکی صدر کی الوداعی تقریر میں شامل ہونے کی اجازت نہیںملی، کیونکہ اگلی ہی صبح اس کا امتحان تھا۔ اس بارے میں سی بی ایس نیوز کے وائٹ ہائوس کے لیے نمائندہ خصوصی، مارک نولر کا کہنا ہے کہ وائٹ ہائوس کی انتظامیہ نے انہیں مطلع کیا تھا کہ ساشا اوباما واشنگٹن ہی میں رہے گی۔

نولر کے مطابق، جب انہوں نے وائٹ ہائوس کی انتظامیہ سے پوچھا کہ ’’ ساشا کہاں تھی؟‘‘ تو جواب ملا کہ ’’ صبح امتحان ہونے کی وجہ سے وہ آج رات واشنگٹن ڈی سی ہی میں گزارے گی۔‘‘

اوباما نے جب اپنی الوداعی تقریر کا آغاز کیا، تو رخصت ہونے والی امریکی خاتون اول نے اپنا بازو اپنی 18سالہ بیٹی، مالیا پر رکھ دیا۔ تقریر کے دوران اوباما کا مالیا کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ’’ مالیا اور ساشا غیر معمولی حالات میں حیرت انگیز نوجوان خواتین بنی ہیں۔ تم دونوں ذہین اور خوبصورت ہو اور اس سے بھی زیادہ اہم بات یہ ہے کہ تم مہربان ہو اور غوروفکر کرتی ہو اور تم میں جوش و جذبہ بھی پایا جاتا ہے۔ میں نے اب تک اپنی زندگی میں جو کچھ بھی کیا، اس میں سب سے زیادہ فخر کی بات یہ ہے کہ میں تمہارا باپ ہوں۔‘‘

خیال رہے کہ ساشا واشنگٹن میں واقع ’’ سڈ ویل فرینڈز‘‘ نامی نجی اسکول کی طالبہ ہیں اور اسی اسکول سے دیگر سابق امریکی صدور کے بچوں مثلاً چیلسی کلنٹن، ٹریشیا نکسن کوکس اور آرکی بالڈ روزویلٹ نے تعلیم حاصل کی ہے۔ یہاں ایک دلچسپ امر یہ بھی ہے کہ ساشا وائٹ ہائوس میں رہنے والی کم عمر ترین بچی ہیں، جبکہ اس سے قبل یہ اعزاز جان ایف کینیڈی کے پاس تھا، وہ 1961ء میں نوجوانی میں وائٹ ہائوس میں داخل ہوئے تھے۔

loading ads...

Facebook Comments



POST A COMMENT.