سردیوں میں بچوں کو بیماریوں سے کیسے بچائیں؟

انتظار فرمائیں۔۔۔

سردی آ نہیں رہی، سردی آ گئی ہے؟ ایک طرف جہاں یہ اچھے کپڑے پہننے، بستر میں مزے کی نیند لینے اور مونگ پھلیاں اور دیگر خشک میوے کھانے کے دن ہیں، وہیں پر یہ بیماریوں کا "موسم بہار" بھی ہے۔ مختلف قسم کے وائرس اور بیکٹیریا سرد موسم میں ہر طرف ایسے موجود ہوتے ہیں جیسے ہوا ميں آبی بخارات۔ اگر آپ بچوں کے والدین ہیں تو اس کا اندازہ آپ کو بخوبی ہوگا کہ سرد موسم میں بچوں کو بیماریوں سے محفوظ رکھنا کتنا بڑا چیلنج ہے۔ اس سے کیسے نمٹا جائے؟ آئیے آپ کو کچھ آسان طریقے بتاتے ہیں:

ہاتھ دھونا


وائرس اور بیکٹیریا کو دور بھگائیں، ہاتھ دھو کر اور یہ بچوں کو بھی سکھائیں۔ سادہ طریقہ: کھانا کھانے سے پہلے اور رفع جاحت کے بعد جھاگ بنائیں اور 30 سیکنڈ تک ہاتھوں کو دھوئیں۔ ناخنوں کی بھی صفائی کریں کیونکہ جراثیم یہیں پنپتے ہیں۔


ٹوتھ برش تبدیل کریں

03-winter-kids
اگر آپ کو نزلہ، منہ کا انفیکشن کا گلے کی خراش کا سامنا ہو تو نیا ٹوتھ برش استعمال کریں۔ دراصل جراثیم دانتوں کے برش میں پناہ لے سکتے ہیں اور اس سے آپ کو دوبارہ انفیکشن ہو سکتا ہے۔ عقلمند مائیں اپنے بچوں کے لیے اضافی ٹوتھ برش گھر پر رکھتی ہیں تاکہ وقت پر کام آ سکیں۔


پیروں کو مت بھولیں

04-winter-kids
سردیوں میں بھاری جوتے اور موزے پیروں کو متاثر کرتے ہیں، اس لیے پیروں کی کٹی پھٹی جلد کے اندر جراثیم کو داخل ہونے سے روکنے کے لیے موئسچرائزر کا استعمال کریں۔ موزے بھی ایسے پہنیں، اور پہنائیں، جن سے نمی فوراً دور ہوتی ہو۔


پانی کا استعمال


سردیوں میں ہو سکتا ہے آپ کو اتنی پیاس نہ لگتی ہو لیکن جسم کو نمی پہنچنا ضروری ہے اور اس کی کمی کی وجہ سے آپ بیماریوں کی زد میں آ سکتے ہیں۔ اس لیے پانی کا استعمال اچھی طرح کریں۔


پھلوں اور میووں کا استعمال

06-winter-kids
ایک تحقیق ثابت کرتی ہے کہ پھلوں، خشک میووں اور اناج کا استعمال مدافعتی نظام کے لیے تقویت رکھتا ہے۔ اس لیے ریشے دار غذائیں ضرور استعمال کریں خاص طور پر 4 سے 8 سال کے بچوں کو ضرور دیں۔


ناک کی صفائی

07-winter-kids
گو کہ ناک صاف کرنا ذرا معیوب سمجھا جاتا ہے لیکن تحقیق ثابت کرتی ہے کہ جو لوگ چھ ماہ تک روزانہ ناک صاف کرتے ہیں ان میں الرجی اور سانس کے مسائل کم رتے ہیں۔ آسان ترین کام نماز کے لیے وضو کریں۔ کئی مسائل اور بیماریاں وضو کے ساتھ ہی ختم ہو جائیں گی۔

loading ads...

Facebook Comments



POST A COMMENT.