بے سبب بے وجہ

انتظار فرمائیں۔۔۔

بے سبب بے وجہ
دِل میں ٹھہرا رہا اِک
غبارِ الم
پگ میں لپٹی رہی ایک حسرت بھری رائیگاں سی مسافت کی نیلی سی دھول
وہ دریچے میں رکھے ہوئے سرخ پھول
اِک الگنی پہ وحشت کی لٹکے ہوئے سرمگیں رات دن
اور وعدوں کے اُجلے سے شوکیس میں دھیرے دھیرے سے بڑھتا ہوا سرمئی سا دھواں
بے سبب بے وجہ
آنکھ بھر آئی تھی
جانے کیوں
پھر دریچے میں رکھے سبھی سرخ پھول
ہجر کی نائیکہ
شب کے پچھلے پہر
خامشی سے محبت کے تابوت پر
یونہی دھر آئی تھی

loading ads...

Facebook Comments



POST A COMMENT.